بلاعنوان ۔2

Posted on 08/11/2005. Filed under: متفرق |

# جج قانون کا ایک ایسا طالب علم ہوتا ہے جو اپنے امتحانی پرچے کی مارکنگ بھی خود کرتا ہے۔

# دلائل کو اونچا اور آواز کو نیچا رکھو۔

# جتنی کوشش آپ اچھا نظر آنے کے لئے کرتے ہیں اس سے کہیں کم کوشش کے ساتھ آپ سچ مچ اچھے بن سکتے ہیں۔

# بارات بھی جنازہ ہی ہوتا ہے، فرق صرف اتنا ہے کہ اس کا ‘مردہ‘ دولہا اور ‘قبر‘ دلہن کہلاتی ہے۔

# زندگی میں ہاتھی سے نمٹنا آسان جبکہ مکھیوں اور مچھروں سے نمٹنا مشکل ہوتا ہے پاکستان کی سیاسی زندگی اس قول کی صداقت کا ثبوت ہے۔

# ہر غریب کو موت کے گھاٹ اتار دیا جائے تو دنیا امیر ہو سکتی ہے۔

# اچھی ریاست کو ماں کی طرح ہونا چاہیے اور گھٹیا ریاست کو سوتیلی ماں جیسا۔

# اپنے اعمال پر غور کرو ! کہیں ایسا تو نہیں کہ ہم اپنے بعد آنے والوں کے لئے نشان عبرت ہوں۔

# انسان کا پہلا احساس بھوک ۔۔۔ پہلی ضرورت خوراک۔

# محض ایک اچھا خیال، اعمال کی مرمت نہیں کر سکتا۔

# جس طرح دولت کسی کو شریف نہیں بنا سکتی اسی طرح افلاس کسی کو کمینہ نہیں بنا سکتا۔

# تنہائی میں خیال اور مجلس میں زبان پر قابو رکھو۔

# شہد اندھیرے میں بھی میٹھا ہوتا ہے اور زہر اجالے میں بھی زہریلا رہتا ہے۔

# ہمارے حکمران چھاچھ مانگتے ہیں اور پیالہ بھی چھپاتے ہیں۔

# حکمران مرغے ہیں تو بانگ دیں، مرغی ہیں تو انڈے دیں ۔۔۔۔ یہ تو صرف بیان دیتے ہیں۔

# گدھوں کو صرف گدھے ہی کھجلا سکتے ہیں۔

# اناج کال نہیں ۔۔۔ راج کال ہوتا ہے۔

# ہمارے دانشوروں کی اکثریت کا یہ حال کہ ‘دیگ ہوئی دم اور حاضر ہوئے ہم‘

Advertisements

Make a Comment

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...

%d bloggers like this: