ہمیں جینا ہے

Posted on 19/11/2007. Filed under: شعروادب |

کتنی لمبی ہو سیہ رات ۔۔۔۔ ہمیں جینا ہے
کتنے سنگین ہوں حالات ۔۔۔۔ ہمیں جینا ہے
ہم تو کہتے تھے زمانے سے جیو، جینے دو
تلخ ہو کتنے ہی اوقات ۔۔۔۔ ہمیں جینے دو
سارے ذہنوں میں یہی سوچ، جئیں ہمت سے
سارے ہونٹوں پہ یہی بات ۔۔۔۔ ہمیں جینا ہے
تندئ باد مخالف سے نہ گھبرائیں گے
ہاتھ میں ہاتھ، رہیں ساتھ، ہمیں جینا ہے
رب کعبہ کی قسم، ظلم سے ٹکرائیں گے ہم
اوج پر سب کے ہیں جذبات ۔۔۔۔ ہمیں جینا ہے
باخبر شہر ہو، آتے ہوئے طوفانوں سے
ٹالتے جائیں گے خطرات ۔۔۔۔ ہمیں جینا ہے
چند چہروں کا نہیں، ملک ہے سب لوگوں کا
جان لیں سب یہ کھلی بات ۔۔۔۔ ہمیں جینا ہے

جیو اور جینے دو

محمود شام ۔ روزنامہ جنگ

Advertisements

Make a Comment

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...

%d bloggers like this: