مسجد قرطبہ

Posted on 30/06/2008. Filed under: اسلام |

ہسپانیہ میں اموی سلطنت کے بانی عبدالرحمٰن اول نے آٹھوین صدی کے اواخر میں یہ مسجد تعمیر کی۔ المنصور اور دیگر حکمرانوں نے گراں قدر اضافے کئے۔ رمضان کی راتوں میں مسجد اسلام کی عظمت کا مظہر ہوتی، پیتل کے شمع دانوں میں ان گنت بتیاں جگمگاتیں۔ حق کے متوالوں سے صحن اور دالان پُر ہوتے۔ تسبیح تراویح کے ترنم اور عنبر کی خوشبو سے فضا مہک اٹھتی۔
نصرانی ہونے کے باوجود اہل قرطبہ میں کلیسا بنانے کی مخالفت تھی۔ وہ آخر دم تک کہتے رہے کہ کلیسا کی تعمیر سے مسجد کی خوبصورتی تباہ ہو جائے گی لیکن آرچ بشپ نے اُن کے خلاف فیصلہ دے دیا۔ دو برس بعد آرچ بشپ کا وہاں سے گزرا تو اُسے پہلی مرتبہ مسجد دیکھنے کا اتفاق ہوا، اپنے کئے پر متاسف ہوا اور کہا ‘‘اگر مجھے معلوم ہوتا کہ مسجد اتنی حسین و جمیل ہے تو کبھی کلیسا کی تعمیر کا حکم نہ دیتا‘‘ یہ روایت قرطبہ کے میونسپل ہال میں ایک دستاویز کی شکل میں محفوظ ہے۔
سلطان سعود ہسپانیہ کا سرکاری دورہ کر رہے تھے، وہ اپنی جماعت کے ساتھ مسجد قرطبہ میں داخل ہوئے تو نماز کا وقت آ گیا۔ سلطان  نے نماز ادا کرنے کے لئے پروٹوکول کے افسران سے اجازت چاہی۔ انہوں نے یہ کہہ کر معذرت چاہی کہ مسجد اب کلیسا میں تبدیل ہو چکی ہے۔ سلطان کا چہرہ تمتا اٹھا انہوں نے کہا ‘‘میں اُس رسول کی اُمت سے ہوں جس نے نصرانیوں کے وفد کو مسجد نبوی میں عبادت کرنے کی اجازت دی اور تم مجھے اپنی مسجد میں نماز ادا کرنے سے روکتے ہو؟‘‘ سلطان نے ایک مصاحب کو اِذن اذان دینے کو کہا اور یوں سات صدیوں بعد مسجد کی خاموش فضاؤں میں ازان کی صدا گونجی۔

آہ!  کہ صدیوں سے ہے تیری فضا بے اذاں

Make a Comment

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...

%d bloggers like this: