تنہا تنہا مت سوچا کر

Posted on 01/07/2008. Filed under: متفرق |

تنہا تنہا مت سوچا کر
مر جائے گا مت سوچا کر

اپنا آپ گنوا کر تو نے
پایا ہے کیا مت سوچا کر

دھوپ میں تنہا کر جاتا ہے
کیوں یہ سایہ مت سوچا کر

پیار گھڑی بھر کا بھی بہت ہے
جھوٹا، سچا مت سوچا کر

راہ کٹھن اور دھوپ کڑی ہے
کون آئے گا مت سوچا کر

وہ بھی تجھ سے پیار کرے ہے
پھر دُکھ ہو گا مت سوچا کر

خواب حقیقت یا افسانہ
کیا ہے دنیا مت سوچا کر

موندے آنکھیں اور چلا چل
منزل رستہ مت سوچا کر

جس کی فطرت ہی ڈسنا ہو
وہ تو ڈسے گا مت سوچا کر

دنیا کے غم ساتھ ہیں تیرے
خود کو تنہا مت سوچا کر

جینا دو بھر ہو جائے گا
جاناں! اِتنا مت مت سوچا کر

مان مرے شہزاد وگرنہ
پچھتائے گا مت سوچا کر

فرحت شہزاد

Make a Comment

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

One Response to “تنہا تنہا مت سوچا کر”

RSS Feed for Pakistani Comments RSS Feed

کم از کم آدھی صدی سے اکیلے ہی سوچ رہا ہوں مگر میں مرا نہیں ۔ چلیں آپ آ جائیے پھر اکٹھے سوچیں گے

اجمل’s last blog post..ایسا کیوں ؟


Where's The Comment Form?

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...

%d bloggers like this: