جوتے کا سائز دس تھا!!

Posted on 15/12/2008. Filed under: دنیا بھر سے, سیاست, عالم اسلام |

اتوار کا دن صدر بش کے لئے بد قسمت ثابت ہوا، عراق کے اچانک دورے کے دوران عراقی وزیراعظم نوری المالکی کے ہمراہ ایک پریس کانفرنس کے دوران ایک عراقی صحافی نے اپنے جوتے صدر بش کو دے مارے اور کہا ’کتے، عراقی عوام کی جانب سے الوداع‘ اس کے بعد جواب میں صدر بش نے اپنے ازلی ڈھیٹ پن کا ثبوت دیتے ہوئے کہا ’میں صرف یہ رپورٹ کر سکتا ہوں کہ اس کا سائز دس تھا۔‘
یہ وہی بات ہوئی جیسے بھٹو صاحب کے ساتھ ہوا تھا، کہا جاتا ہے کہ کسی جلسہ عام میں کسی نے بھٹو کی طرف جوتا پھینکا تھا جواب میں بھٹو نے کہا کہ مجھے پتہ ہے چمڑا بہت مہنگا ہو گیا ہے۔
بہرحال صدر کے لئے یہ الوداعی ملاقات انتہائی بُری ثابت ہوئی، کہا جاتا ہے کہ اچھے انسان کے ساتھ اچھی یادیں اور بُرے انسان کے ساتھ ہمیشہ بُری یادیں وابستہ رہتی ہیں۔ اب صدر بش بھی اپنی باقی ماندہ زندگی انہی بُری یادوں کے سائے میں گزاریں گے۔

وڈیو

Advertisements

Make a Comment

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s

7 Responses to “جوتے کا سائز دس تھا!!”

RSS Feed for Pakistani Comments RSS Feed

وقت کے نمرود پر بھی جوتوں کی شروعات ہو گئ سبحان اللہ یہ بری یادیں تازندگی بش کا پیچھا نہ چھوڑینگی اور اب وہ اپنی حرکتوں پر جتنا بھی پچھتاوا کرے کم ہے بش نے سوچا ہو گا کہ میں عراق پر اور افغانستان پر حملہ کرکے ایک فاتح کہلاؤنگا اور مرنے کے بعد بھی فاتح عالم کے نام سے جان جاؤنگا مگر بش جی خداء عزّوجل نے ایسی فضیحت کی ہے کہ تم باقی ماندہ زندگی بھی تمہارے لئے ایک عار بن گئ

طفل’s last blog post..لذّت گوشت اور شدّت بھوک

جوتے دو ہی اچھے

جوتے اگر استعمال نہ ہوں تو بھلے کتنے ہی ہوں،کیا ہے؟لیکن اگر استعمال ہو جائیں تو دو بھی بہت ہیں۔
بظاہر ایک غیر مہذب حرکت پر پوری دنیا میںہونے والا ردّ ِ عمل در اصل ایک عالمی ریفرنڈم بھی ہے اور نیا ورلڈ آرڈر بغدادمیں فرعونِ وقت کے آخری دورے پر انہیں دو جوتوں کی سلامی اور کلبِ خبیث کے خطاب کا تحفہ ایک غیرت مند عراقی صحافی منتظر الزیدی نے دیا ہے۔حسینیت کے درس کی اس سے اعلیٰ محفل شاید ہی کبھی سجی ہو۔”غیر مہذب” منتظر نہ کسی دینی مدرسہ کا طالب علم رہا ہے،نہ القاعدہ اور طالبان کا رکن۔نہ پاکستانی ہے نہ افغانی۔وہ جدید تعلیم حاصل کر کے عراق کے سینئیر ترین صحافیوں میں شمار کیا جانے والا ایک ”ذمّہ دار” شہری ہے۔غربت،بے روزگاری،نشہ،مذہبی انتہا پسندی وغیرہ کے الزامات بھی اس پر نہیں لگ سکتے۔اس کے ریکارڈ میں کوئی نفسیاتی عدم اعتدال کی رپورٹ بھی نہیں ہے۔
منتظر نے بش کو جوتے نہیں مارے بلکہ ایک عالمی فرضِ کفایہ ادا کیا ہے۔ملتِ مرحوم کا قرض ادا کیا ہے۔بے بس کمزور اور نہتّے غلام انسانوں کی طرف سے دنیا کے سب سے طاقتور،منظم اور عظیم استحصال کے علم بردار ملک امریکہ کو وہ پیغام دیا ہے جو اس سے زیادہ جامع اور موثر انداز میں ممکن نہیں۔صرف ایک ”عمل” اوراور ایک” لفظ” کی شکل میں۔عمل جوتے مارنے کا اور لفظ کتّے کا(کتوں سے معذرت کے ساتھ)۔
دنیا میں پالیسی اسٹڈیز اور اوپینین پولز اور رائے اور رجحان جاننے ، ناپنے او ر تجزیہ کرنے کے تمام تر اداروں اور ان کے طریق ہائے تجزیہ سے زیادہ صحت کے ساتھ اس ریفرنڈم کے نتائج ہیں۔جس پر کسی کو کوئی اختلاف نہیں۔یہی دنیا بھر کی رائے ہے۔غلاموں کی اس دنیا میں کیا جانے والا یہ عمل صدیوں کا قرض تھا جو منتظر زیدی نے ادا کیا ۔
15دسمبر008ء کی صبح واقعی ایک نئی صبح تھی جب زمین پر بسنے والے انسان اپنے اوپر حیوانوں اور درندوں کے جبر سے پسے اور اپنے ارادوں اور دلوں کی کمزوریوں پر کڑھنے کے بجائے احساس فتح مندی کے ساتھ ایک دوسرے سے ملے ۔ انسانی تاریخ میں آ ج تک ایک ساتھ کبھی انسان اتنی بڑی تعداد میں خوش ہو کر شاید ہی ملے ہوں ۔
جوتو ں نے موجودہ عالمی سیاست میں ویسے بھی اہم کردار اد اکیا ہے ۔ہم تو 100جوتے اور 100پیاز کھانے کی ورزش میں پہلوان ہوگئے ہیں بلکہ رستم زماں کا اعزاز حاصل کرچکے ہیں۔جوتے چاٹنے کے بعد اس میں اپنی ہی شکل دیکھ کر ڈرنے میں مہارت حاصل کرلی ہے۔
لیکن جوتوں کا جو استعمال منتظر الزیدی نے کیا ہے یہ تو انسانیت کی معراج ہے جو خودداری اور غیرت کی دین ہے ۔

(ظفر اقبال)

یہ صرف بش نہیں پوری امریکی قوم کے لئے ذلت کی بات ہے۔ لیکن بش یہ بھی کہہ کر بھی اس پر فخر کر سکتا ہے کہ ”میں نے تو امریکی قوم کے لئے جوتے تک کھائے ہیں“ 😀 جب بندہ میں نا مانوں کی رٹ لگا لے تو کچھ بھی کہہ سکتا ہے

اسلام عليكم ورحمت لله وبراكتو بعد بوش جوتى 10 ايك اجه وقت ديا سب خوش همشه اىساجاى

وســـــــــــلام اودوعا

باكســـتان زنداباد

خوش امديد

اسے کہتے ہیں اچانک دورے پہ اچانک حملہ! ہاہاہا
منطزر نے تھیک کیا،

آن لائن اخباری رپوٹر’s last blog post..Oil pipeline burst in Korangi

ظفر اقبال صاحب نے ہمارے قومی رویے کی جو بات کی ہے اس کی ذمہ داری حکمرانوں پر ہے عوام پر نہیں۔عوام سب منتظر جیسے ہیں اور اس کردار کی ادائیگی کے منتطر ہیں

حشام احمد سید
جوتا زیدی کا
( عراق کے واقعہ پر )

سنتے ہیں کہ اُس جوتے کا اب دام بہت ہے
ذکر جوتے کا ہر صبح اور ہر شام بہت ہے
جوتے کو جلا ڈالا کہ وہ انسان ہو جیسے
لیکن اس صنعت میں تو بڑھا کام بہت ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سنتے ہیں کہ ہر سمت سے پیغام ہے آیا
کتنوں سے نکاح ہوگا بھلا میرے خدایا
یہ بات بھی چل نکلی ہے یاروں میں کہ تُف ہے
یہ جوتا یہاں کیوں نہ بھلا ہم نے بنایا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہڈی تری توڑی ہے نتیجے میں تو کیا ہے
اظہارِ جوانمردی کی یہ تھوڑی سی سزا ہے
کچھ دے تو دیا زیدی، سبق قوم کو تو نے
تیرے لیے اللہ ہے اور اُس کی جزا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمت پہ کوئی زیدی کے آواز نہ کسنا
جوتے کی ہی تقدیر میں تھا بُش پہ برسنا
اتنا تو سُجھایا کسی زہریلے فتن کو
آساں نہیں ہوتا ہے کسی گھر کو لے ڈسنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب کوئی بھی میٹنگ ہو یہ جوتا نہ پہننا
یہ حکم ہے تفتیش میں آسانی نہ کرنا
کسی سر کے ارادے نہ کہیں پیر سے نکلے
جوتے کے بھی فیتے کو ذرا زور سے کسنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُس جوتے کی قسمت کہ کہاں جا کہ پڑا ہے
جِس جھنڈے کے آگے یہاں ہر سر ہی جھکا ہے
مسکین سے جوتے نے بڑا کام کیا ہے
ورنہ تو ہر اک آدمی مبہوت کھڑا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

ظفر اقبال’s last blog post..محترمہ بینظیر بھٹو شہید دی یاد اچ


Where's The Comment Form?

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...

%d bloggers like this: