شعروادب

بستی کو الزام نہ دو گھر لٹنے کا

Posted on 12/11/2009. Filed under: شعروادب | ٹيگز:, , , , , , , |

بستی کو الزام نہ دو گھر لٹنے کا
گھر کے بھی کچھ لوگ لُٹیرے ہوتے ہیں
سونے کی زنجیر گلے میں مت ڈالو
کچھ سانپوں کے رنگ سنہرے ہوتے ہیں

ذرہ حیدرآبادی

Advertisements
Read Full Post | Make a Comment ( None so far )

اب تو لمحوں کی بھی فرصت نہیں، آرام کہاں؟

Posted on 11/11/2009. Filed under: شعروادب | ٹيگز:, , , , , , |

لے کے آیا ہے کہاں وقت کا گرداب مجھے
کر دیا اپنے ہی خیالات نے غرقاب مجھے

پھر مخاطب ہوں شبِ ہجر کی تنہائی سے
اے سحر! اور کوئی گی کوئی خواب مجھے

درد ہی درد ملے ہاتھ کی ریکھاؤں میں
کم نصیبی نے دئیے حیف یہ اسباب مجھے

اب تو لمحوں کی بھی فرصت نہیں، آرام کہاں؟
زندگی اور سکھائے گی کچھ آداب مجھے

خشک سالی کا یہ عالم ہے کہ شاہین اب تو
اپنے دریا میں بھی پانی ملے، نایاب مجھے

ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ

Read Full Post | Make a Comment ( None so far )

عید وطن

Posted on 21/09/2009. Filed under: پاکستان, شعروادب | ٹيگز:, , , , |

اس طور اب کے گزری ہے اہل چمن کی عید
جیسے وطن سے دور غریب الوطن کی عید

دست جمیل رنگ حنا کو ترس گئے
بوئے سمن کو ڈھونڈتی ہے پیرہن کی عید

عارض ہیں زخم زخم تو آنکھیں لہو لہو
دیکھی نہ ہو گی دوستو اس بانکپن کی عید

گل رنگ قہقوں کی فصیلوں سے دور دور
نالہ بلب گزر گئی غنچہ دہن کی عید

اے ساکنان دشت جنوں کس نشے میں ہو
شعلوں کی دسترس میں ہے سرو و سمن کی عید

Read Full Post | Make a Comment ( 5 so far )

مسٹر جیم ۔ کتنا بدل گیا انسان

Posted on 20/08/2009. Filed under: وڈیو زون, شعروادب | ٹيگز:, , , |

Read Full Post | Make a Comment ( None so far )

آٹھواں میرا پیار

Posted on 14/08/2009. Filed under: پاکستان, شعروادب | ٹيگز:, , , , |

پاک زمیں کی ہنستی رتوں کا
دھنک دھنک اظہار
دھنک کے سچے سات رنگ اور
آٹھواں میرا پیار
١٤ اگست
آسماں اور دھرتی کے درمیان زندہ
سارے منظر سمیٹے
ایک وطن کی تشکیل کا دن
آج ہم ان منظروں کو کچھ
اور نہ سجا دیں ۔۔۔۔
گیتوں سے ۔۔۔
جھنڈوں سے۔۔۔
اور پھولوں سے ۔۔۔۔

Read Full Post | Make a Comment ( 2 so far )

میرے پرندے میرے بچے

Posted on 18/07/2009. Filed under: شعروادب | ٹيگز:, , , , , , , , , |

میرے ننھے گھر کے اندر
اک ننھا سا پیڑ لگا ہے
پیڑ کا سایہ تھوڑا ہے پر بہت گھنا ہے
کچھ دن پہلے، نیلے پیلے لال پروں والی دو چڑیاں
نازک نازک گھاس کے تنکے ڈھونڈ کے لائیں
اک گھر کی بنیاد بنا کر گھونسلا اک ننھا سا بنا کر
چڑیا دن بھر بیٹھی رہتی اور چڑا محنت سے دن بھر دانہ لاتا
چڑیا کے دو بچوں کی آوازیں سن کر
میں اور میرا ساتھی دونوں خوش ہو گئے
گھونسلے کو آفت سے بچاتے
آج صبح وہ دونوں چڑیاں بچے لیکر
گھونسلا چھوڑ کے چلی گئی ہیں
ہم دونوں خاموش کھڑے ہیں
اک دوجے کو دیکھ رہے ہیں سوچ رہے ہیں
ہم دونوں جب بوڑھے ہوں گے
بچے اپنے ہی اس گھر کے کمرے میں
ایک نئے ننھے گھر کی بنیاد رکھیں گے
اور پھر ان چڑیوں کی مانند
اپنے بچے لے جائیں گے
گھر کو سونا کر جائیں گے
میں اور میرا ساتھی اس دن مر جائیں گے
اک ننھے سے گھر کے اندر ایک اور ننھے گھر کا منظر
کتنا پیارا لگتا ہے
لیکن جب اس گھر کے باسی اور کسی منزل کی جانب اڑ جائیں
تب گھر ویرانہ لگتا ہے
دل بھی رونے لگتا ہے
گھر بھی رونے لگتا ہے
عظمٰی گوہر

Read Full Post | Make a Comment ( 3 so far )

تمھیں کیا خبر

Posted on 22/04/2009. Filed under: شعروادب | ٹيگز:, , , , , , , , |

راتوں کو اٹھ کر، خیالوں سے ہو کر، یادوں میں کھو کر، تمھیں کیا خبر
اپنے خدا سے ۔۔۔۔۔۔!
میں کیا مانگتا ہوں، ویرانوں میں جا کر، دکھڑے سنا کر، دامن پھیلا کر
آنسو بہا کر، تمھیں کیا خبر
اپنے خدا سے میں کیا مانگتا ہوں
تم کہو گے، صنم مانگتا ہوں، زر مانگتا ہوں
میں گھر مانگتا ہوں، زمیں مانگتا ہوں، نگیں مانگتا ہوں ۔۔۔!
تم تو کہو گے، ہم کو خبر ہے کہ راتوں کو اٹھ کر، خیالوں سے ہو کر
یادوں میں کھو کر، آنکھیں بھگو کر، کسی دلربا کی، کسی دلنشیں کی
وفا مانگتا ہوں، یہ بھی غلط ہے، وہ بھی غلط ہے، جو بھی ہے سوچا
سو بھی غلط ہے، نہ صنم مانگتا ہوں، نہ زر مانگتا ہوں
نہ دلربا کی، نہ دلنشیں کی، نہ ماہ جبیں کی وفا مانگتا ہوں
تمھیں کیا خبر ۔۔۔ اپنے خدا سے کیا مانگتا ہوں
میں اپنے خدا سے
آدم کے بیٹے کی آنکھوں سے جاتی ۔۔۔۔ حیا مانگتا ہوں
حوا کی بیٹی کے سر سے اترتی ۔۔۔۔۔ ردا مانگتا ہوں
اس کڑے وقت میں ۔۔۔۔ پاک وطن کی بقا مانگتا ہوں
تمھیں کیا خبر، میں کیا ماگتا ہوں

Read Full Post | Make a Comment ( 1 so far )

تم آؤ ہمارے ساتھ چلو

Posted on 15/03/2009. Filed under: شعروادب | ٹيگز:, , , , , |

ہم معصوموں کے ساتھی
آواز ہیں ہم مظلوموں کی
انصاف کی خاطر نکلے ہیں
تم آؤ ہمارے ساتھ چلو

نہ لوٹوں سے کچھ آس رکھو
نہ جھوٹوں سے امید رکھو
ہم سچ کی خاطر نکلے ہیں
تم آؤ ہمارے ساتھ چلو

ہم اپنے رہبر خود ہوں گے
ہم اپنی منزل خود ہوں گے
امید کی خاطر نکلے ہیں
تم آؤ ہمارے ساتھ چلو

انصاف کا سورج نکلے گا
ہاں کوچہ کوچہ بدلے گا
ہم عدل کی خاطر نکلے ہیں
تم آؤ ہمارے ساتھ چلو

ہم جھکنے والے لوگ نہیں
ہم بکنے والے لوگ نہیں
اقدار کی خاظر نکلے ہیں
تم آؤ ہمارے ساتھ چلو

ہم سب کا ایک ہی رستہ ہے
ہم سب کی ایک ہی منزل ہے
دھرتی کی خاطر نکلے ہیں
تم آؤ ہمارے ساتھ چلو

اب جینا مرنا دھرنا ۔۔۔ ہے
دم مست قلندر کرنا ہے
تم آؤ ہمارے ساتھ چلو
عینی سیدہ

Read Full Post | Make a Comment ( 1 so far )

بوٹاں والا

Posted on 26/02/2009. Filed under: شعروادب, طنز و مزاح | ٹيگز:, , , |

زرداری نے لے لیا پنگا اے
پریشان ہر اک بندہ اے
اس نے کم تاں کیتا گندا اے
ہن ملک دا حال وی مندا

لوگ اک دوجے نوں مارن گے
گدیاں تے ٹائر وی ساڑن گے
ہن مست قلندر ہووے گا
اک بندہ حکومت کھووے گا
او بوٹاں والا ہووے گا

Read Full Post | Make a Comment ( 1 so far )

ڈھونڈو گے اگر ملکوں ملکوں

Posted on 23/01/2009. Filed under: شعروادب |

ڈھونڈو گے اگر ملکوں ملکوں ملنے کے نہیں نایاب ہیں ہم
تعبیر ہے جس کی حسرت و غم اے ہم نفسو وہ خواب ہیں ہم
میں حیرت و حسرت کامارا خاموش کھڑا ہوں ساحل پر
دریائے محبت کہتا ہے آ کچھ بھی نہیں پایاب ہیں ہم
 لاکھوں ہی مسافر چلتے ہیں منزل پہ پہنچتے ہیں دو ایک
اے اہل زمانہ قدر کرو نایاب نہ ہوں کمیاب ہیں ہم
مرغانِ قفس کو پھولوں نے اے شاد یہ کہلا بھیجا ہے
آجاؤ جو تم کو آنا ہے ایسے میں ابھی شاداب ہیں ہم

شاد عظیم آبادی

Read Full Post | Make a Comment ( None so far )

« پچھلی تحاریر

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...