پاپائے روم کے بیان کا مکمل متن

Posted on 17/09/2006. Filed under: دنیا بھر سے | ٹيگز:, , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , , |

پاپائے روم بینیڈکٹ نے مسلمانوں کی طرف سے ان کے بارہ ستمبر کے بیان پر ناراضگی کے بعد افسوس کا اظہار کیا ہے۔ پاپائے روم کے بیان کا متن۔

پیارے بہنو اور بھائیو،
لوگوں کے نجی معاملات میں مدد کے حوالے سے حال ہی میں بواریا کا میرا دورہ طاقتور روحانی تجربہ تھا جس میں جانی پہچانی جگہوں سے اور مقدس پیغام کے مؤثر اظہار کے لیئے شروع کیئے جانے والے لوگوں کی فلاح کے منصوبوں سے وابستہ یادیں شامل تھیں۔

میں اندرونی خوشی کے لیئے خدا کا شکر گزار ہوں اور میں ان لوگوں کا بھی شکر گزار ہوں جنہوں نے اس پیسٹورل دورے (لوگوں کی نجی زندگی میں مدد کے لیئے کئے جانے والے کام) میں میری مدد کی۔

اس دورے کے بارے میں مزید بات چیت روایت کے مطابق آئندہ بدھ کو ہونے والے جلسۂ عام میں ہوگی۔

اس وقت میں یہ بھی کہنا چاہوں گا کہ مجھے جرمنی میں دیئے گئے اپنے بیان کے کچھ حصوں پر، جو مسلمانوں کو برے لگے تھے، چند ممالک میں ہونے والے رد عمل پر بہت افسوس ہے۔

وہ دراصل قرون وسطیٰ کی ایک دستاویز سے لیئے گئے تھے اور میرے جذبات کی عکاسی نہیں کرتے۔

کل خارجہ امور کے نگران نے اس کے بارے میں ایک بیان جاری کیا تھا میرے بیان کا صحیح مفہوم سمجھایا گیا تھا۔

میں امید کرتا ہوں کہ اس سے بے چینی ختم ہوگی اور میرے بیان کا درست مطلب واضح ہوگا جو باہمی احترام کے ساتھ بلا تکلف اور مخلصانہ مکالمے کی دعوت ہے۔

اس سے پہلے ویٹیکن میں خارجہ امور کے نگران تارسیسیو بیرٹونے نے ایک بیان پڑھ کر سنایا جس میں پاپائے روم بینیڈکٹ نے کہا ہے کہ انہیں افسوس ہے کہ ان کی ایک تقریر جس میں انہوں نے اسلام کا حوالہ دیا تھا مسلمانوں کو بری لگی ہے۔

مسلمانوں کی جانب سے مقدس باپ کی جامعۂ رجینزبرگ میں تقریر کے کچھ حِصّوں پر اعتراض اور ’ہولی سی‘ کے پریس آفس کے ناظم کی طرف سے جاری کی گئی وضاحت میں مندرجہ ذیل اضافہ کرنا چاہتا ہوں۔

اسلام کے بارے میں پاپائے روم کا مؤقف وہی ہے جو کلیسا کے غیر عیسائی مذاہب کے ساتھ روابط کے بارے میں اعلامیے میں بیان کیا گیا ہے۔

’کلیسا مسلمانوں کو بھی تقریم کی نظر سے دیکھتا ہے۔ وہ اس ایک خدا کی عبادت کرتے ہیں، جو کسی کا محتاج نہیں، مہربان اور قدرت والا ہے، آسمان اور زمین کا خالق ہے، جو انسان سے مخاطب ہوا، وہ(مسلمان) اس کے مشکل ترین احکامات کی بجا آوری میں ہر تکلیف برداشت کرتے ہیں جیسا کہ ابراہیم نے کیا تھا جس کے ساتھ مذہبِ اسلام اپنا ناطہ جوڑے جانے پر خوشی محسوس کرتا ہے۔

وہ عیسیٰ کو خدا نہیں مانتے لیکن اس کا بحیثیت پیغمبر احترام کرتے ہیں۔ وہ مریم کو بھی بلند مقام دیتے ہیں اور بعض اوقات ان سے عقیدت کے ساتھ رجوع بھی کرتے ہیں۔

اس کے علاوہ ان کا آخرت پر ایمان ہے جب خدا مردوں کو زندہ کر کے ان کے میدانوں میں کھڑا کر دے گا۔

آخر میں وہ اچھی زندگی گزارنے پر یقین رکھتے ہیں اور خدا کی عبادت کرتے ہیں خاص طور پر دعا، خیرات اور روزے کے ذریعے‘۔

پاپائے روم کی بین المذاہب اور بین الثقافتی مکالمے کے بارے میں سوچ میں کوئی شک و شبہہ نہیں۔

انہوں نے جرمنی کے شہر کولون میں بیس اگست سن دو ہزار پانچ میں مسلمانوں سے ملاقات کے دوران کہا تھا کہ مسلمانوں اور عیسائیوں کے درمیان مکالمے کو ممکنات کے زمرے میں نہیں ڈالا جا سکتا۔

’ماضی کے تجربات یقیناً ہمیں غلطیوں دہرانے سے روک سکتے ہیں۔ ہمیں صُلح کے راستے تلاش کرنے چاہیں اور ایک دوسرے کی شناخت کو قبول کرتے ہوئے باہمی احترام کے ساتھ جینا چاہیے‘۔

جہاں تک بازنتینی بادشاہ مینویل دوئم کے ان خیالات کا تعلق ہے، جن کا حوالہ انہوں نے ریجنزبرگ میں دیا تھا، پاپائے روم کا ان کو کسی بھی طرح نہ اپنانے کا کوئی ارادہ تھا اور نہ ہی ان کی بات کا یہ مطلب تھا۔

ان کا یہ حوالہ دینے کا مقصد صرف تعلیمی تناظر میں مذہب اور تشدد کے درمیان تعلق کے موضوع پر عمومی طور پر کچھ خیالات کا جائزہ لینا اور سختی سے اس سوچ کو مسترد کرنا تھا کہ مذہب میں تشدد کا جواز تلاش کیا جا سکتا ہے اور یہ ان کے بیان کے مکمل متن کے بغور مطالعے سے واضح ہے۔

اس موقع پر یہ بات قابل ذکر ہے کہ پاپائے روم نے حال ہی میں اپنے پیش رو کی طرف سے شروع کیئے جانے والے امن کے بین المذاہبی دعائیہ اجلاس کی بیسویں برسی کے موقع پر کہا تھا کہ ’۔۔۔۔تشدد کی وجہ مذہب نہیں بیان کی جا سکتی بلکہ یہ ان ثقافتی حدوں کا نتیجہ ہے جن میں اس پر عمل ہوتا ہے اور جن میں یہ پنپتا ہے۔۔۔۔۔در حقیقت خدا کے ساتھ رشتہ اور اخلاقیاتِ محبت میں تعلق کی تمام عظیم مذہبی روایات سے تصدیق ہوتی ہے‘۔

مقدس باپ پس مخلصی کے ساتھ معذرت خواہ ہیں کہ ان کے بیان کے کچھ حصے مسلمانوں کو برے لگے ہوں گے اور ان کا ایسا مطلب نکالا گیا جو کسی بھی طرح ان کا ارادہ نہیں تھا۔

اور یہ پاپائے روم ہی تھے جنہوں نے مسلمانوں کے مشتعل ہونے سے پہلے سیکولر مغربی ثقافت کو متنبہ کیا تھا کہ ’خدا کی توہین‘ اور آزادی اظہار کے ایسے خبط سے باز رہیں جو مقدس چیزوں کی تضحیک کو جائز سمجھتا ہو۔

پاپائے روم نے اسلام کے ماننے والوں کے لیئے اپنے احترام کا اعادہ کرتے ہوئے امید ظاہر کی کہ وہ ان کے الفاظ کا درست مطلب سمجھ سکیں گے تاکہ موجودہ بے چینی کو پیچھے چھوڑ کر ’انسان سے مخاطب ہونے والے آسمان اور زمین کے خالق‘ کی گواہی دی جا سکے اور ’مِل کر تمام انسانیت کے لیئے انصاف اور اخلاقی بہبود اور امن اور آزادی‘ کے لیئے کوششیں تیز کی جا سکیں۔ بشکریہ بی بی اردو

Read Full Post | Make a Comment ( None so far )

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...