کشمیر بنے گا پاکستان

Posted on 05/02/2009. Filed under: پاکستان | ٹيگز:, , , , , , , , , , , , , , , , , , , , |

٥ فروری کشمیری مسلمانوں کے ساتھ یکجہتی کے اظہار کا دن قرار پاہا ۔۔۔
اس دن بے ہمتی اور بزدلی کی چادر اتار کر متحد اور منظم ہو کر اپنے جذبات کا بھر پور اظہار کریں ۔۔۔۔۔۔۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ مسلماناں کشمیر کے ناحق بہنے والے خون کی ذمہ داری آپ کے سر آ جائے!!!
٥ فروری کو اگر ہم یوم تجدید کہیں تو غلط نہ ہو گا۔ جموں و کشمیر کی سیاسی تاریخ میں کئی اہمیت کے دن اور بھی ہیں جن میں

١٦ مارچ ١٨٤٦ء کا وہ مخصوص دن جب ‘معاہدہ امرتسر‘ کے تحت کشمیر کو ٧٥ نانک شاہی سکوں کے عوض مہاراجہ گلاب سنگھ کو فروخت کر دیا۔
١٣ جولائی ١٩٣١ء کو یومِ شہدائے کشمیر منایا جاتا ہے۔ اس روز سرینگر میں بائیس فرزندان توحید نے جامِ شہادت نوش فرما کر تحریک حریت کشمیر کو اپنے انقلابی دور میں داخل کیا۔
١٤ اگست ١٩٣١ء کو علامہ اقبال کی تحریک پر یوم کشمیر منایا گیا۔
٣٠ اکتوبر ١٩٣١ء کو آزادی کشمیر میں پہلا پنجابی (پاکستانی) مسلمان شیخ الہی بخش چنیوٹی شہید ہوا۔
یکم جنوری ١٩٤٨ء کو بھارت مسئلہ کشمیر کو سلامتی کونسل میں لے کر گیا۔
اگست ١٩٤٨ء اور جنوری ١٩٤٩ء کو سلامتی کونسل نے کشمیر میں رائے شماری کرانے کی قراردادیں منظور کیں۔
دسمبر ١٩٦٩ء میں موئے مبارک کی تحریک چلی۔
جنوری ١٩٦٥ء بھارت نے شیخ محمد عبدللہ کو گیارہ سال کی اسیری کے بعد رہا کیا۔
شیخ محمد عبداللہ کا دورہ پاکستان ١٩٦٥ء میں ہوا، غیر ملکی دورہ اور وطن واپسی پر گرفتاری
٥ فروری ١٩٨٦ء میاں نواز شریف وزیراعظم پاکستان کی طرف سے کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کے اظہار کے لئے ہڑتال کی اپیل، اس کے بعد اسی روز جماعت اسلامی کے امیر قاضی حسین احمد نے ٥ فروری کو ہر سال یوم یکجہتی منانے کی اپیل کی۔ اس وقت سے ہر سال پاکستان آزاد جموں و کشمیر اور مقبوضہ جموں و کشمیر کے سرکاری اور عوامی حلقے ہڑتال کرتے ہیں۔
آج ٥ فروری کشمیری مسلمانوں کے ساتھ یکجہتی کے اظہار کا دن قرار پاہا ۔۔۔
اس دن بے ہمتی اور بزدلی کی چادر اتار کر متحد اور منظم ہو کر اپنے جذبات کا بھر پور اظہار کریں ۔۔۔۔۔۔۔ کہیں ایسا نہ ہو کہ مسلماناں کشمیر کے ناحق بہنے والے خون کی ذمہ داری آپ کے سر آ جائے!!!
٥ فروری کو اگر ہم یوم تجدید کہیں تو غلط نہ ہو گا۔ جموں و کشمیر کی سیاسی تاریخ میں کئی اہمیت کے دن اور بھی ہیں جن میں
١٦ مارچ ١٨٤٦ء کا وہ مخصوص دن جب ‘معاہدہ امرتسر‘ کے تحت کشمیر کو ٧٥ نانک شاہی سکوں کے عوض مہاراجہ گلاب سنگھ کو فروخت کر دیا۔
١٣ جولائی ١٩٣١ء کو یومِ شہدائے کشمیر منایا جاتا ہے۔ اس روز سرینگر میں بائیس فرزندان توحید نے جامِ شہادت نوش فرما کر تحریک حریت کشمیر کو اپنے انقلابی دور میں داخل کیا۔
١٤ اگست ١٩٣١ء کو علامہ اقبال کی تحریک پر یوم کشمیر منایا گیا۔
٣٠ اکتوبر ١٩٣١ء کو آزادی کشمیر میں پہلا پنجابی (پاکستانی) مسلمان شیخ الہی بخش چنیوٹی شہید ہوا۔
یکم جنوری ١٩٤٨ء کو بھارت مسئلہ کشمیر کو سلامتی کونسل میں لے کر گیا۔
اگست ١٩٤٨ء اور جنوری ١٩٤٩ء کو سلامتی نے کشمیر میں رائے شماری کرانے کی قراردادیں منظور کیں۔
دسمبر ١٩٦٩ء میں موئے مبارک کی تحریک چلی۔
جنوری ١٩٦٥ء بھارت نے شیخ محمد عبدللہ کو گیارہ سال کی اسیری کے بعد رہا کیا۔
شیخ محمد عبداللہ کا دورہ پاکستان ١٩٦٥ء میں ہوا، غیر ملکی دورہ اور وطن واپسی پر گرفتاری
٥ فروری ١٩٨٦ء میاں نواز شریف وزیراعظم پاکستان کی طرف سے کشمیریوں کے ساتھ یکجہتی کے اظہار کے لئے ہڑتال کی اپیل، اس کے بعد اسی روز جماعت اسلامی کے امیر قاضی حسین احمد نے ٥ فروری کو ہر سال یوم یکجہتی منانے کی اپیل کی۔ اس وقت سے ہر سال پاکستان آزاد جموں و کشمیر اور مقبوضہ جموں و کشمیر کے سرکاری اور عوامی حلقے ہڑتال کرتے ہیں۔

آج ٥ فروری ہے پوری قوم سراپا احتجاج بنی ہوئی ہے۔
کشمیریوں کی جدوجہد ہماری قومی غیرت اور جذبوں کا نشاں ہے۔ ہمارے بھائی، بہنیں، بچے اور بوڑھے سر پر کفن باندھے اپنے لہو کا نذرانہ دیکر وقت کی کربلا میں رسم شبیری ادا کر رہے ہیں۔
شہیدوں اور غازیوں کی منزل قریب ہے، وہ دن دور نہیں جب ہم کشمیر کو آزاد دیکھیں گے۔
تاریخ اس بات کی گواہ ہے کہ ایک خدا اور ایک رسول کے ماننے والے زیادہ دیر تک غلامی کی زنجیریں نہیں جکڑ سکتیں۔
کراچی کے ساحلوں سے کشمیر کی لہو رنگ وادیوں تک مکمل ہڑتال، تمام جماعتوں، تنظیموں اور ہر طبقہ فکر بھارتی مظالم کے خلاف سراپا احتجاج بنا ہوا ہے، پوری قوم یک زبان ہے کہ

کشمیر بنے گا پاکستان
Read Full Post | Make a Comment ( 1 so far )

واعتصمو بحبل اللہ جميعا و لاتفرقوا

Posted on 13/12/2008. Filed under: پاکستان, دنیا بھر سے, عالم اسلام | ٹيگز:, , , , , , , , , , , , , , , , , , , |

اس وقت عالم اسلام کو مخلص قیادت کے ساتھ ساتھ آپس کے سیاسی نفاق کا بھی سامنا ہے جس کی وجہ سے کبھی عراق ایران کے ساتھ آٹھ سال لڑتا ہے تو کبھی کویت پر حملہ کر دیتا ہے۔ کبھی سعودی عرب کے تعلقات ایران سے بگڑ جاتے ہیں تو کبھی ایران اور پاکستان کے تعلقات خراب ہو جاتے ہیں۔ پاکستان آزاد ہوتا ہے تو افغانستان اسے اقوام متحدہ میں تسلیم ہی نہیں کرتا اور پھر جب افغانستان پر بُرا وقت آتا ہے تو پاکستان تیس لاکھ افغانیوں کو اپنے ہاں پناہ دے دیتا ہے۔ لیکن شمالی اتحاد کی حکومت سارے اقدامات ماننے سے انکاری ہوتی ہے اور پاکستان کے مقابلے میں بھارت سے دوستی کی پینگیں بڑھاتا ہے، افغانستان کی دوبارہ تعمیرِنو میں زیادہ تر ٹھیکے ہندوؤں کو مل جاتے ہیں۔
قرآن مجید میں اللہ تعالٰی واضح طور پر ارشاد فرماتا ہے۔
‘‘واعتصمو بحبل اللہ جميعا و لاتفرقوا‘‘
کہ اللہ کی رسی کو مضبوطی سے پکڑو اور تفرقہ نہ ڈالو ”
لیکن اس کے باوجود مسلمان آپس میں متحد نہیں ہو رہے ہیں۔
نفاق کی حد تو یہ ہے کہ کشمیر میں لائن آف کنٹرول پر کئی پاکستانی فوجیوں نے ایرانی ساخت کے بم بھی پکڑے ہیں جبکہ (او، آئی، سی) اسلامی سربراہی کانفرنس کے تقریباََ چونتیس ممالک بھارت سے دوستی اور تجارت کی پینگیں بڑھاتے نظر آ رہے ہیں، کچھ عرصہ پہلے ایران اور بھارت کے درمیان جنگی معاہدے کی بازگشت بھی گردش میں رہی ہے۔
پاکستان نے ہمیشہ فلسطین کے مسئلے پر عربوں کا ساتھ دیا جبکہ خود یاسر عرفات مرحوم اور ان رفقاء بھارت کے حامی ہیں اور سابق مرحوم عراقی صدر صدام حسین کی طرح یاسر عرفات نے کشمیر کے بارے میں کبھی پاکستان کی حمایت نہیں کی بلکہ الٹا بھارت سے دوستی بڑھاتے نظر آئے۔
پاکستان اسلامی نظریہ کے اصول پر معرض وجود میں آتا ہے تو مصر کے حکمران ہنس پڑتے ہیں کہ پاکستانیوں کو دیکھو اب یہ ہماری رہنمائی کریں گے لیکن خدا کا کرنا ایسا ہوا کہ وہی پاکستان اسلامی دنیا کا پہلا اور واحد ایٹمی ملک بن گیا۔
بھارت کے شہر ممبئی میں دو ہوٹلوں پر حملہ ہوتا ہے تو سب سے پہلے پاکستان کا نام لیا جاتا ہے پھر جماعت الدعوۃ کر اس میں ملوث کیا جاتا ہے۔ اس کے فوراََ بعد اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا ہنگامی اجلاس ہوتا ہے اور اس میں جماعت الدعوۃ کو دہشت گرد قرار دے کر اس پر پابندی لگا دی جاتی ہے اور پاکستان کو حکم دیا جاتا ہے کہ ان کے خلاف فوری ایکشن لیا جائے۔ جبکہ اس کے برعکس بھارت میں گجرات اور دیگر علاقوں میں ہزاروں مسلمانوں کو مار دیا جاتا ہے، سینکڑوں کو زندہ جلایا جاتا ہے، ہندو انتہا پسند تنظیم اس سارے واقعہ کی ذمہ داری قبول کرتی ہے لیکن اس کے خلاف کوئی ایکشن نہیں لیا جاتا۔ سلامتی کونسل چپ سادھ لیتی ہے۔
ان سارے واقعات کی روشنی میں بتائیے اس وقت پاکستان کہاں کھڑا ہے۔ عالم اسلام میں مخلص قیادت نہ ہونے اور آپس کا نفاق مسلسل پاکستان اور خود عالم اسلام کو نقصان پہنچا رہا ہے۔

Read Full Post | Make a Comment ( 2 so far )

Liked it here?
Why not try sites on the blogroll...